حرف روی کی تعریف۔ ایک استفسار کا جواب

اردو محفل پر ایک عزیز محمد اسامہ سرسریؔ صاحب نے کچھ عرصے پہلے ناچیز سے ایک سوال کیا تھا جس کا جواب دینے میں گو کہ مصروفیات کی وجہ سے کافی دیر لگی لیکن سوال کچھ ایسا ہے کہ بنا وضاحت اور مکمل تفصیل کے میرے لئے یہ جواب دینا ممکن نہیں تھا۔ بہرحال تمام مصروفیات کے باوجود جب یہ کام سرانجام دینے میں کامیاب ہوگیا ہوں تو قارئین کی خدمت میں بھی پیش کئے دے رہا ہوں۔

سوال: جناب مزمل شیخ بسمل صاحب! حرف روی کی جامع اور مانع تعریف کیا ہے؟

جواب: حرفِ روی کی جامع اور مانع تعریف کے لئے اچھا خاصہ وقت لیا جس کے لیے معذرت۔ کچھ مصروفیات اور مزاجی سستی اور کاہلی اور کبھی غفلت آڑے آتی رہی۔ آج سوچا کہ اسامہ بھائی کے اس قرض کو بھی چکا دیا جائے۔ واضح رہے کہ علم قافیہ ایک خشک علم ہے، پھر ہر عالم نے اپنے تجربات اور مشاہدات اور اپنے علم کے مطابق اس میں مختلف موضوعات میں ایک سے زائد آراء قائم کی ہیں، میرا تجربہ ہے کہ اگر کوئی انسان صرف حرفِ روی کے تمام پہلو سمجھ لے تو وہ علمِ قافیہ کا مکمل عالم بن سکتا ہے اس کے بعد تمام محاسن اور معائب کھل کر خود ہی سامنے آجاتے ہیں۔ تو بسم اللہ۔

حرف روی فضلائے عروض کے نزدیک

جان لینا بہتر ہے کہ متقدمین اور آئمہ نے حرفِ روی کی کوئی جامع تعریف نہیں کی، ہر عالم نے حرفِ روی کے بیان میں اس کی تعریف کو بہت مختصر رکھا ہے، یہ شاید انکی اپنی ہی تشفی کی خاطر ہے بظاہر اور کوئی وجہ سمجھ میں نہیں آتی۔

محقق طوسی جو عجمی عروض پر سند ہیں، معیارالاشعار میں روی کی تعریف صرف اتنی لکھتے ہیں:

”اما حرف روی حرفی است مکرر کہ بنائے قافیہ بروی است و ہر قصیدہ کہ بقافیہ منسوب باشد نسبتش بحرف روی کنند، مثلاً قصیدہ را کہ ضرب و سلب قافیہ باشد بائی خوانند، و قصیدہ را کہ حمل و رحل قافیہ باشد لامی خوانند“

کشن پرشاد بہادر نے مخزن القوافی میں صرف اتنا لکھا ہے:

”روی وہ حرف ہے جس کے بغیر قافیہ نہ ہوسکے، مدارِ قافیہ اسی حرف پر ہوتا ہے“

میر انشااللہ خان نے بھی ایک حرف کی تکرار کو حرف روی کہا ہے جو بیت کے آخر میں آتا ہے۔

یاس عظیم آبادی نے چراغ سخن میں لکھا ہے:

”روی قافیہ کے حرفِ آخر و اصلی کو کہتے ہیں یا وہ جو بمنزلہ حرف آخر کے ہو۔“

نجم الغنی نجمی رامپوری نے بحرالفصاحت میں لکھا ہے:

روی اس حرفِ آخر کو کہتے ہیں جو مصرع یا بیت کے آخر میں واقع ہو، یہ حرف مکرر آتا ہے۔ قافیہ کی بنیاد اس پر ہے۔ اکثر اصلی ہوتا ہے اور بعض اوقات زائد کو بھی اصلی کے حکم میں لے لیتے ہیں۔

مرزا عسکری نے آئینۂ بلاغت میں لکھا ہے:

”قافیہ کی بنیاد روی پر ہے، بغیر اس کے قافیہ کا کوئی وجود نہیں، اسے قافیہ کی اصل اور اساس سمجھنا چاہئے۔
اس کی دو قسمیں ہیں۔
۱۔ روی مقید: روی ساکن ہے جو مصرع یا بیت کے آخر میں مکرر آئے۔
۲۔ روی مطلق: اسے کہتے ہیں جب روی کے بعد کوئی حرف ہو اور روی متحرک ہو۔“
۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔ ۔۔۔
اس کے بعد سب نے مثالیں لکھی ہیں جن کا فی الوقت محل نہیں۔
اب ہم حرف روی کو شاعری کی رو سے سمجھتے ہیں۔ تاکہ جو کچھ ان کتابوں نے اختصار سے لکھا ہے وہ ہمیں تفصیلی طور پر سمجھ میں آجائے۔ میں نے حرف روی کی تعریف کو دو حصوں میں بانٹ دیا ہے۔

حرف روی کیا ہے؟

۱۔ لفظ کا سب سے آخری حرف جو اصلی بھی ہو اور بنا کسی تغیر کے ہر شعر کے آخر میں آئے (یاد رہے کے زائد حروف ردیف میں شمار ہونگے۔ کیونکہ اس میں ردیف اصطلاحی کی تعریف صادق آتی ہے)۔ لفظ میں اصلی حروف کی پہچان بھی بہر حال مبتدیان کے لئے کوئی آسان نہیں، اس لئے میں نے اصلی اور زائد حروف کو سمجھنے کے لئے عبارت کو آسان اور قابل فہم بنانے کی پوری کوشش کی ہے۔

قافیہ میں اصلی حروف صرف وہ ہیں جو ”مصدرِ قافیہ“ میں آتے ہیں یعنی مصدرِ قافیہ اصلی حروف پر مشتمل ہوتا ہے اور زوائد سے پاک ہوتا ہے۔ کسی بھی لفظ کا مصدرِ قافیہ لفظ کا کم سے کم اور چھوٹے سے چھوٹا حصہ ہوتا ہے اور اس میں سے کسی حرف کو حذف کرنے سے لفظ بے معنی ہوجائے گا۔ مثلاً: نشانی، نشانوں، نشانیاں وغیرہ کا مصدرِ قافیہ ”نشان“ ہے۔ اب اس مصدر سے اگر مزید کوئی حرف کم کیا گیا تو لفظ بے معنی ہو جائے گا، اور لفظ ”نشان“ کے آگے کے جو بھی حروف ہیں وہ زائد ہیں، حرفِ روی مصدرِ قافیہ کا آخری حرف ہوتا ہے جو یہاں نون ہے۔ یا دوسری مثال میں دیکھیں مثلاً: دوستی، دوستیاں، دوستوں، دوستاں وغیرہ۔ اس میں بھی ظاہر ہے کہ مصدرِقافیہ لفظ کا سب سے چھوٹا حصہ ہوگا۔ اب ایک ایک حرف کرکے حذف کریں تو ایک وقت آئے گا جب صرف ”دوست“ رہ جائے گا۔ کیونکہ اس کے بعد کچھ بھی حذف کرنے سے لفظ یا تو بے معنی ہو جائے گا یا پھر کسی اور لفظ میں تبدیل ہوجائے گا، ہمیں نہ تو لفظ بے معنی کرنا ہے، نہ اس کے معنی کو بدلنا ہی مقصود ہے۔ اس لئے یہاں ہمارا مصدرِ قافیہ صرف ”دوست“ ہے اور حرفِ روی اسی طرح مصدرِ قافیہ کا سب سے آخری حرف یعنی ”ت“ ہے۔ حرف روی نون کے ساتھ میرؔ :


نکلے چشمہ جو کوئی جوش زناں پانی کا
یاد دہ ہے وہ کسو چشم کی گریانی کا

حرف روی الف کے ساتھ حسرتؔ موہانی:


کیا کہیے آرزو ئے دلِ مبتلا ہے کیا
جب یہ خبر بھی ہو کہ وہ رنگیں ادا ہے کیا​

”ادا“ اور ”مبتلا“ دونوں مصادرِ قافیہ ہیں اور الف حرفِ روی۔
=> ایسے الفاظ جن کے مصدرِ قافیہ میں آخری حرف ہائے مختفی ہو ان میں حرفِ روی ہائے مختفی سے ماقبل حرف ہوتا ہے۔ جیسے: غنچہ میں ”چ“، آشفتہ، سوختہ، گزشتہ وغیرہ میں ”ت“ اور تشنہ، افسانہ، فسانہ، نشانہ، خانہ وغیرہ میں ”نون“ حرفِ روی ہے۔ حرف روی ”ز“ کے ساتھ غالبؔ:


شب خمارِ شوقِ ساقی رستخیز اندازہ تھا
تا محیطِ بادہ صورت خانۂ خمیازہ تھا

=> فعل جیسے: لکھنا، پڑھنا، کھاتا، پیتا، سوتا، دیکھا، جانا، بوجھا وغیرہ میں پہلے نکتے والا اصول کارفرما ہے، یعنی حروف کو حذف کریں یہاں تک کہ لفظ کا سب سے چھوٹا حصہ با معنی باقی رہے اور اس کے بعد مزید کسی حرف کو حذف کرنے کی گنجائش نہ ہو۔ اس کا ایک آسان اور عام سا اصول سمجھا دیتا ہوں، جب بھی قافیہ کوئی فعل ہو تو اس فعل کا صیغۂ امر بنا دیجئے، صیغۂ امر مصدرِ قافیہ ہے۔ اس میں جو بھی آخری حرف ہو اسے بنا سوچے سمجھے روی کہہ دیجئے۔ مثلاً: ”پینا“ سے ”پی“ (ی حرف روی)، ”سوتا“ سے ”سو“ (واؤ حرف روی)، دیکھا اور بوجھا سے دیکھ اور بوجھ (کھ اور جھ حرف روی) علٰی ہٰذالقیاس۔ حرفِ روی لام کے ساتھ امیر مینائی:


کیا قصد جب کچھ کہوں اُن کو جل کر
دبی بات ہونٹوں میں منہ سے نکل کر

کسی اسم عام اور فعل دونوں میں حرفِ روی کی صورت ایک جیسی ہو تو ان دونوں کا خلط بھی عام ہے۔ میرؔ:


مر رہتے جو گل بن تو سارا یہ خلل جاتا
نکلا ہی نہ جی ورنہ کانٹا سانکل جاتا

خلل اور نکل دونوں میں حرفِ روی اصلی حرف لام واقع ہوا ہے۔ اور دونوں کا خلط روا ہے۔
حرف روی ”ر“ کے ساتھ داغؔ:


راہ دیکھیں گے نہ دنیا سے گزرنے والے
ہم تو جاتے ہیں، ٹھہر جائیں ٹھہرنے والے​

مجھے شاید یہ بتانے کی ضرورت نہیں ہے کہ گزرنے اور ٹھہرنے وغیرہ میں گزر اور ٹھہر مصادر ہیں باقی حروف زائد ہیں۔ اس لئے حرفِ روی ”ر“ ہے اور ”نے والے“ ردیف کا حصہ ہے۔
اسی طرح حرف روی ”ر“ کے ساتھ میرؔ:


مشہور ہیں دنوں کی مرے بے قراریاں
جاتی ہیں لامکاں کو دل شب کی زاریاں

”ر“ حرف روی اور باقی زائد حروف ”یاں“ ردیف کا حصہ ہیں۔
ان ساری مثالوں سے جو بات واضح ہوتی ہے وہ یہ ہے کہ قافیہ میں حرفِ روی اصل ہے۔ اور حرفِ روی کا تعین مطلع میں ہی کر لیا جاتا ہے، غزل میں مطلع کے بعد جو اشعار آتے ہیں ان میں حرف روی کا کوئی اعتبار نہیں، اور جو حرف روی مطلع میں طے ہو گیا اسے پوری غزل میں یا نظم میں برقرار رکھنا ضروری ہے اور اسے نبھانا بھی ہوگا۔ اب جبکہ یہ واضح ہے کہ حرف روی قافیہ میں اصل ہے، تو یہ بھی ثابت ہوا کہ ایسی نظم جس میں حرفِ روی نہ ہو اس نظم کو سخت معیوب مانا جائے گا اور اس میں قافیہ کا کوئی وجود نہ ہوگا۔
بغیر حرف روی کے وصی شاہ:


سمندر میں اُترتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں
تری آنکھوں کو پڑھتا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں

اتر میں ”ر“ روی ہے، اور پڑھ میں ”ڑھ“۔ روی مکرر نہیں ہے، ”تا ہوں تو آنکھیں بھیگ جاتی ہیں“ ردیف ہے، اور قافیہ موجود ہی نہیں۔ اس لئے یہ شعر سخت معیوب اور شاعر کی علوم سے ناواقفیت کا روشن ثبوت ہے۔
نوشی گیلانی:

کُچھ بھی کر گزرنے میں دیر کتنی لگتی ہے
برف کے پگھلنے میں دیر کتنی لگتی ہے​

گزر اور پگھل۔ روی کا اختلاف۔ اس لئے یہاں بھی قافیہ کا کوئی وجود نہیں۔
پروین شاکر:

چہرہ میرا تھا، نگاہیں اُس کی
خامشی میں بھی وہ باتیں اُس کی
نگاہ اور بات۔ روی کا اختلاف ہے۔ اس لئے یہاں بھی کوئی قافیہ نہیں ہے۔ اسے اصطلاح میں ”ایطائے جلی“ کہا جاتا ہے۔
اب میرے خیال میں اتنی مثالیں اس موضوع کے لئے کافی اور تشفی بخش ہیں جو میں نے واضح طور پر بیان کردیا ہے۔ حرفِ روی کو لفظی ساخت کی بنا پر سمجھنا گو کہ ایک تفصیل طلب کام ہے لیکن میں نے اسے اپنی جانب میں بہت وضاحت کے ساتھ بیان کردیا ہے، اب بھی اگر کوئی سوال ہو تو ضرور اظہار فرمائیں تاکہ معلوم ہوسکے کہ میں اپنے مقصد میں کس حد تک کامیاب ہوا۔

۲۔ پہلا نکتہ تو میں نے حرفِ روی کو مصدرِ قافیہ کے اعتبار سے بیان کردیا ہے اور اس کو آپ نے مثالوں کے ساتھ سمجھ لیا اور یہ بھی سمجھ لیا کہ لفظی اعتبار سے حرفِ روی کیا چیز ہے۔
روی کی دوسری صورت وہ ہے جس میں حرفِ اصلی کی بجائے حرفِ زائد کو حرفِ روی کا قائم مقام بنایا جاتا ہے، اور اس زائد حرف کو بھی حرفِ روی مان لیا جاتا ہے۔ تفصیل اس کی اس طرح ہے کہ مطلع میں اگر کسی مصرعے میں ایک قافیہ اپنے اصلی حرفِ روی کے ساتھ موجود ہے تو دوسرے مصرع کے قافیہ میں کسی حرفِ زائد کو حرفِ روی شمار کرلیا جاتا ہے۔ اور اس سے فائدہ یہ ہوتا ہے کہ قافیہ میں کشادگی پیدا ہوجاتی ہے۔ مثلاً مطلع میں ایک مصرع میں لفظ ”مداوا“ قافیہ کیا، دوسرے مصرع میں لفظ ”مچلنا“ کو قافیہ کردیا، گو کہ مچلنا میں حرفِ روی لام ہے اور باقی حروف زائد ہیں، لیکن ہم نے لفظ ”مداوا“ کے اصلی الف کا سہارا لے کر مچلنا کے زائد الف کو روی بنایا ہے۔ اسی طرح مطلع میں ایک قافیہ ”دین“ رکھا، اور دوسرا ”زرین“ تو بھی درست ہے۔ گو کہ زرین میں اصل حرفِ روی ”ر“ ہے۔ مگر دین کے اصلی نون کا سہارا لے کر ہم نے زرین کے زائد نون کو حرفِ روی کے حکم میں لے لیا۔ لیکن واضح رہے کہ اگر دونوں مصرعوں میں زائد حرف کو حرفِ روی ٹھہرا لیا تو قافیہ شائگان یعنی ایطائے جلی ہو جائے گا، اور اگر دونوں مصرعوں میں اصل حرف کو حرفِ روی ٹھہرایا تو قافیہ درست رہے گا لیکن بعد کے تمام اشعار میں اصل حرفِ روی والے قوافی ہی لانے کی پابندی فرض ہوگی۔ اس کے برعکس اگر مطلعے میں ایک اصل اور ایک زائد حرفِ روی لائے تو آگے کے تمام اشعار میں یہ اختیار ہے کہ جہاں چاہیں اصل حرفِ روی لائیں، جہاں چاہیں زائد لائیں۔ ایک اصل اور ایک زائد روی کی مثال فرازؔ:
یہی بہت ہے کہ محفل میں ہم نشِیں کوئی ہے
کہ شب ڈھلے تو سحر تک کوئی نہیں کوئی ہے
 
یہ ہست و بود، یہ بود و نبود، وہم ہے سب
جہاں جہاں بھی کوئی تھا، وہیں وہیں کوئی ہے

مطلع میں غور کریں تو معلوم ہوگا کہ ”نشین“ کا نون اصل حرفِ روی ہے، جبکہ ”نہیں“ میں حرفِ روی ”ہ“ ہے، لیکن نشین کے نون کا سہارا لے کر نہیں کے نون کو حرفِ روی بنایا۔ اس کے بر خلاف اگر مطلع میں ایک مصرع میں ”نہیں“ اور دوسرے میں ”وہیں“ قافیہ ہوتا تو حرفِ روی ”ہ“ ٹھہرتا، اور اس ”ہ“ کا نبھانا فرض ہوجاتا جس سے قافیہ بھی تنگ ہوجاتا، لیکن اس حیلے سے فائدہ یہ ہے کہ اب اصلی اور زائد ہر دو طرح کے قوافی لائے جاسکتے ہیں۔ ایک اور مثال دیکھیں:

ہے عجب حال یہ زمانے کا
یاد بھی طور ہے بھُلانے کا
کاش ہم کو بھی ہو نصیب کبھی
عیش دفتر میں گنگنانے کا​

یہاں حرفِ روی نون ہے، حالانکہ بھلانا میں نون زائد ہے، لیکن ”زمانے“ کے اصلی نون کے سہارے سے بھلانے کے نون کو حرفِ روی کرکے قافیہ میں کشادگی پیدا کی گئی ہے۔ ورنہ اگر بھلانے کے ساتھ ”سلانے“ یا ”رلانے“ ہوتا تو قافیہ تنگ ہو جاتا، اور حرفِ روی "الف" ہوجاتا۔ اور اس کی پابندی بھی ضروری تھی۔ اگلے شعر میں قافیہ ”گنگنانے“ اسی حیلے کا فیضان ہے۔

(674 مرتبہ دیکھا گیا)

مزمل شیخ بسمل

سلجھا ہوا سا فرد سمجھتے ہیں مجھ کو لوگ الجھا ہوا سا مجھ میں کوئی دوسرا بھی ہے

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

19 تبصرے

  1. ایک اشکال:
    آپ نے کہا:
    یہاں حرفِ روی نون ہے، حالانکہ بھلانا میں نون زائد ہے، لیکن ”زمانے“ کے اصلی نون کے سہارے سے بھلانے کے نون کو حرفِ روی کرکے قافیہ میں کشادگی پیدا کی گئی ہے۔ ورنہ اگر بھلانے کے ساتھ ”سلانے“ یا ”رلانے“ ہوتا تو قافیہ تنگ ہو جاتا، اور حرفِ روی لام ہوجاتا۔ اور اس کی پابندی بھی ضروری تھی۔ اگلے شعر میں قافیہ ”گنگنانے“ اسی حیلے کا فیضان ہے۔

    یعنی:
    بھلانے سلانے اور رلانے میں حرف روی ل ہے۔
    جبکہ میرے خیال میں ان میں حرف روی الف ہے۔
    غور فرمالیجیے۔

    • Abdul basit says:

      بھلانے ،سلانے ،رلانے
      میں الف حرف روی بنے گا مگرالف زائد ہے ان سب میں ۔۔
      کیا یہ بات درست ہے؟؟؟
      اگر نہیں تو سمجھا دیں۔۔۔۔۔

      • مزمل شیخ بسمل says:

        جی نہیں. بھلانا، سلانا اور رلانا میں الف اصلی ہی ہے. اور روی بھی یہی بنے گا. مصدرِ قافیہ کا جو اصول بتایا گیا ہے اس حساب سے آسانی سے سمجھا جاسکتا ہے کہ امر کا صیغہ یہاں پر مصدرِ قافیہ ہے. یعنی بھلا اور سلا. اور ان میں آخری حرف ہی حرفِ روی ہے.

  2. جی آپ نے درست جانب اشارہ کیا ہے۔ بہت شکریہ اس توجہ کا۔ مضمون لکھتے وقت مجھے اس بات کا خیال نہیں معلوم کیوں نہیں رہا۔ اور تحریر کو لکھ کر واپس نہ پڑھنے کی میری بہت بری عادت ہے کہ میں پروف ریڈنگ یا نظر ثانی کرنے سے ہمیشہ بھاگتا ہوں۔ اسے خطا سمجھ کر معاف کیجئے گا۔ رلانا اور بھلانا وغیرہ میں در اصل حرف روی لام نہیں بلکہ الف ہی ہے۔
    بلاگ پر آتے رہئے گا اور اغلاط کا تدارک کرنے میں مدد کرتے رہئے گا۔
    جزاکم اللہ خیرا

  3. ضرور ان شاء اللہ ، یہ بلاگ میرے لیے مکتب کی طرح ہے۔ 🙂

  4. lareb Sohail says:

    سبحان اللہ۔۔
    انتہائی خوبصورت اور تفصیلی مضمون
    اور مکرمی اُسامہ صاحب کا خوبصورت اشکال
    دونوں احباب سلامت رہیں

  5. جناب لاریب صاحب۔ بلاگ پر خوش آمدید۔ ہمیں خوشی ہے کہ آپ بلاگ پر تشریف لائے۔ آتے رہیے۔

    خوش رہیں۔

  6. Sufyan Butt says:

    بہت عمدگی سے بیان فرمایا آپ نے. بہت شکریہ.

  7. Mureed Baqir says:

    سبحان الله ....

    زندگی میں پهلی بار دیکھا که پاکستان میں فی سبیل الله علم تقسیم کیا جا رها هے ...
    الله پاک جزاۓ خیر دے ...آمین

  8. Syed Kashif says:

    جزاک الله شیخ مزمل صاحب ... نہایت سہل طریقے سے حرف روی کے متعلق ساری معلومات شیر و شکر کر دی آپ نے ... بہت بہت شکریہ

  9. بلاگ پر خوش آمدید۔
    سلامت رہیں۔

  10. بلاگ پر خوش آمدید اور آپ کی عزت افزائی پر ممنون ہوں۔
    خوش رہیں۔ 🙂

  11. saleem momin says:

    آپ حضرات کا بہت بہت شکریہ جو اس طرح آن لائن ایک قیمتی علم پر تحقیقات شیئر فرماتت ہیں

    جزاکم اللہ خیرا احسن و اجمل و اوفی و اتم و اعظم و اھم و اکبر الجزاء لکم و لاھلکم و لاجیالکم فی الدنیاء و الآ خیرہ

  12. Farhat Saeedi says:

    ہےعمدہ اور مفیدتحریر

  13. Jafar Hussain says:

    آپ کے بلاگ کی کیا بات ہے بہت زیادہ معلوماتی اور ادبی ماحول مہیا کر تا ہے۔ حرف روی پر آپ حضرات کی بحث بہت زبردست تھی۔ معلومات میں اضافہ ہو۔ جناب اگر ممکن ہو تو بندہ کو جناب ولی دکنی کے متعلق کچھ معلومات درکار ہیں۔ انکی زندگی اور شاعری کے متعلق اور نیز کیا وہ پہلا اردو کا شاعر ہونے کا اعزاز رکھتے ہیں؟

  14. arham says:

    urdu tehqiq me istemal hone wali istelahat ki wazahat kar dijiye

تبصرہ کریں