دنیا میں آکے خلد کے مہمان بٹ گئے

حکمِ خدا سے ہٹتے ہی ارمان بٹ گئے
دنیا میں آکے خلد کے مہمان بٹ گئے
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
رنگوں کی ہے زبان ، زبانوں کے رنگ ہیں
انسانیت سمٹ گئی ، انسان بٹ گئے
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
جنت کے ٹھیکے دار جہنم نواز ہیں
اسلام مٹ گیا کہ مسلمان بٹ گئے؟
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
تم ہو جہادی ، ہم ہیں مبلغ ، وہ پیر ہیں
ایثارِ جان و مال کے یکجان بٹ گئے
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
اُس کی نماز اچھی ہے ، اِس کی زکوۃ خوب
اعمال زندہ ہیں ، مگر ارکان بٹ گئے
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
مطلب کی ڈھونڈ ، گرچہ مؤرخ کی بات ہو
مطلب کہ سب مطالبِ قرآن بٹ گئے
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔
مہدی کی جستجو ہے ، مسیحا کا انتظار
ہو ہو کے سب اسامہ! پریشان بٹ گئے
۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔ ۔

شاعر: محمد اسامہ سَرسَری

یہ بھی پڑھیں:   بحر الفصاحت از مولوی نجم الغنی خاں رام پوری

(66 مرتبہ دیکھا گیا)

محمد اسامہ سرسری

محمد اسامہ سرسری مستند عالِمِ دین اور فقہِ اسلامی کے متخصص ہیں۔ اسامہ صاحب دینی تعلیمات کے ساتھ ادبی اور فنی سرگرمیوں کا بھی فعال حصہ ہیں۔ انتہائی محنتی اور معاون طبیعت رکھتے ہیں اور متعدد کتب کے مصنف بھی ہیں ، کتاب "آؤ شاعری سیکھیں" ان کی اب تک کی شہ کار تصنیف ہے جسے اندرون و بیرون ملک ہر جگہ خوب پذیرائی ملی ہے۔ سوشل نیٹ ورک پر سینکڑوں لوگوں کو ادب اور شاعری کی فنیات آسان انداز میں سبقاً سبقاً سکھاتے ہیں۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

3 تبصرے

  1. محمد اسماعیل says:

    ماشاءاللہ کیا بات ہے ، جنت سے نکلنے لے کر قرب قیامت تک کی غم بھری داستان کو بڑی خوبصورتی سے سات اشعار میں پیش کیا ہے واہ مزہ آگیا۔

    • محمد اسامہ سرسری says:

      جزاک اللہ خیرا برادرم! اس حوصلہ افزائی اور ذرہ نوازی پر ممنون ہوں۔ 🙂

  2. ندیم مراد says:

    کیا بات ہے زبردست غزل

تبصرہ کریں