رباعی کے ”دو“ اوزان

ابھی کچھ دیر پہلے ایک عزیز سے رباعی کے اوزان کے متعلق بات چل رہی تھی کہ رباعی کے چوبیس اوزان کو یاد رکھنا بڑا مشکل کام ہے اور بڑے بڑے عروضی بھی ان چوبیس اوزان کو اسی طرح لکھتے ہیں اور شاگردوں کو یاد کرواتے ہیں۔
قارئین میں جو میرا مضمون ہندی بحر کے حوالے سے پڑھ چکے ہیں انہیں کچھ عجب محسوس نہ ہوگا البتہ جو نا مانوس ہیں ان کے لئے تو یقیناً نئی چیز ہے۔ بہر حال کوئی لمبی کہانی نہیں ہے۔
سبھی جانتے ہیں کہ رباعی کے سب اوزان بحرِ ہزج سے ہیں، لیکن اس میں اتنی لمبی چوڑی تراکیب اور پھر شجرے وغیرہ یہ محض الجھانے والی باتیں ہیں رباعی کے محض دو وزن ہیں۔ بلکہ میں تو ایک ہی وزن مانتا ہوں ان دو کو بھی۔ مگر سمجھنے کی نیت سے ابھی ہم انہی دو وزن کو دیکھتے ہیں، اور در حقیقت یہی دو وزن کا اجتماع جائز ہے باقی چوبیس الگ الگ اوزان کی تراکیب بھول جائیں۔
بحرِ ہزج مثمن سالم:
مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن مفاعیلن
رباعی کے زحافات:
1۔ خرب (= خرم اور کٖف )
2۔ کف
3۔ قبض
4۔ بتر
یہ چار زحافات ہیں جو رباعی پر کام کرتے ہیں۔
1۔ خرب میں کف اور خرم جمع ہوتے ہیں،
خرم  کا کام ہے کہ رکن کے شروع میں اگر وتدِ مجموع ہو تو اسکا پہلا حرف گرا دے مفاعیلن میں میم گرے گا۔
اور کف کا کام ہے کہ رکن کے آخری میں جو سبب خفیف ہو اس کے دوسرے حرف یعنی ساکن کو گرا دیتا ہے مفاعیلن میں نون ساقط ہونا مراد ہے۔
خرم و کف دونوں جب ایک ہی رکن پر کام کرتے ہیں تو ”خرب“ کہلاتے ہیں
2۔ کف کا کام اکیلے میں وہی ہے جو اوپر بیان کیا کہ مفاعیلن سے نون کا اسقاط۔
3۔ قبض  کا زحاف حرف پنجم گرا دیتا ہے جو سبب خفیف میں ہو اور ساکن ہو۔ مفاعیلن سے ”ی“ کا گرانا مقصود ہے یہاں۔
4۔ بتر کا زحاف پورا وتد مجموع ختم کرتا ہے جو رکن کے شروع میں ہو، مفاعیلن سے ”مفا“ کا ختم کرنا مراد ہے یہاں۔
اب آتے ہیں ان دو اوزان پر جو رباعی میں استعمال ہوتے ہیں
پہلا وزن:
مفعولُ مفاعلن مفاعیلُ فعَل
دوسرا:
مفعولُ مفاعیلُ مفاعیلُ فعَل
مفعولُ خرب سے حاصل ہوا ۔ اخرب کہلاتا ہے
مفاعلن قبض سے۔ مقبوض کہلاتا ہے
مفاعیلُ کف سے۔ مکفوف کہلاتا ہے
فعَل بتر اور قبض سے۔ ابتر مقبوض کہلاتا ہے
الغرض ہم ان دو اوزان کو اپنی رباعی میں جمع کر سکتے ہیں
1۔ مفعولُ مفاعلن مفاعیلُ فعَل
2۔ مفعولُ مفاعیلُ مفاعیلُ فعَل
اور جیسا آاپ پہلے پڑھ چکے ہیں تو آپ کو پتا ہونا چاہئے کہ آخری میں ایک ساکن بڑھانا عروض میں جائز ہے تو فعل کو فعول بھی بنایا جاسکتا ہے، گویا یہ دو اوزان یاد ہونے کے بعد آپ کو دو مزید اوزان خود ہی حاصل ہوگئے یوں چار اوزان آپ کے پاس ہو گئے۔
اب آپ کو وہی کام کرنا ہے جو ہندی بحر کے ساتھ کیا تھا !!!!
جی ہاں! تسکین اوسط۔۔
بس تسکینِ اوسط کا زحاف لگاتے جائیں اور وزن اپنے آپ بنتے جائینگے اور کل ملا کر انکی تعداد چوبیس ہوگی۔
میں نے یہ کام بھی آپ کی سہولت کے لئے کردیا ہے تو ذرا خود ہی ملاحظہ فرمالیں ۔
مذکورہ بالا دو اوزان میں جو پہلا وزن ہے اس میں دو جگہ تسکین اوسط کا زحاف کام کرتا ہے،
اور دوسرے والے میں تین جگہ۔
بس جہاں تین حرکات مستقل ہوں وہاں اپنی مرضی سے درمیان والی حرکت کو ساکن کردیں یوں پہلے وزن سے آٹھ اور دوسرے سے سولہ اوزان کا استخراج ہوگا ملاحظہ فرمائیں۔

رباعی کے دو اوزان:

پہلا:

1۔ مفعول مفاعلن مفاعیل فعل
2۔ مفعولم فاعلن مفاعیل فعل =مفعولن فاعلن مفاعیل فعَل
3۔ مفعول مفاعلن مفاعیلف عل =مفعول مفاعلن مفاعیلن فع
4۔ مفعولم فاعلن مفاعیلف عل= مفعولن فاعلن مفاعیلن فع
5۔ مفعول مفاعلن مفاعیل فعول =مفعول مفاعلن مفاعیل فعول
6۔ مفعولم فاعلن مفاعیل فعول =مفعولن فاعلن مفاعیل فعول
7۔ مفعول مفاعلن مفاعیلف عول =مفعول مفاعلن مفاعیلن فاع
8۔ مفعولم فاعلن مفاعیلف عول =مفعولن فاعلن مفاعیلن فاع

دوسرا:

9۔ مفعول مفاعیل مفاعیل فعل
10۔ مفعولم فاعیل مفاعیل فعل =مفعولن مفعول مفاعیل فعَل
11۔ مفعول مفاعیلم فاعیل فعل =مفعول مفاعیلن مفعول فعَل
12۔ مفعول مفاعیل مفاعیلف عل =مفعول مفاعیل مفاعیلن فع
13۔ مفعولم فاعیلم فاعیلف عل =مفعولن مفعولن مفعولن فع
14۔ مفعولم فاعیلم فاعیل فعل =مفعولن مفعولن مفعول فعَل
15۔ مفعولم فاعیل مفاعیلف عل =مفعولن مفعول مفاعیلن فع
16۔ مفعول مفاعیلم فاعیلف عل =مفعول مفاعیلن مفعولن فع
17۔ مفعول مفاعیل مفاعیل فعول =مفعول مفاعیل مفاعیل فعول
18۔ مفعولم فاعیل مفاعیل فعول =مفعولن مفعول مفاعیل فعول
19۔ مفعول مفاعیلم فاعیل فعول =مفعول مفاعیلن مفعول فعول
20۔ مفعول مفاعیل مفاعیلف عول =مفعول مفاعیل مفاعیلن فاع
21۔ مفعولم فاعیلم فاعیلف عول = مفعولن مفعولن مفعولن فاع
22۔ مفعولم فاعیلم فاعیل فعول =مفعولن مفعولن مفعول فعول
23۔ مفعولم فاعیل مفاعیلف عول = مفعولن مفعولُ مفاعیلن فاع
24۔ مفعول مفاعیلم فاعیلف عول =مفعول مفاعیلن مفعولن فاع
بس یہی کل چوبیس اوزان ہیں جو ان دو اوزان سے حاصل ہوتے ہیں۔ بعض عروضیوں مثلاً یاس عظیم آبادی مرحوم یا اور دیگر حضرات کا کہنا ہے کہ تسکین اوسط کے زحاف لگانے پر سیکڑوں اوزان نکل سکتے ہیں مگر رباعی فقط چوبیس اوزان پر ہے تو بسملؔ عرض کرتا ہے کہ ہمیں بھی ان سیکڑوں اوزان میں سے چند ایک نکال کر بتادیں جو ان چوبیس اوزان کے علاوہ ہوں!
خیر یہی تھوڑی سی کہانی تھی رباعی کی۔ امید کرتا ہوں کہ سمجھنا کوئی زیادہ مشکل نہیں ہوگا کیونکہ علمِ عروض کوئی اتنی مشکل چیز نہیں اگر خود اپنی لاعلمی کی وجہ سے اسے مشکل بنا نہ لیا جائے تو۔
دعائے خیر کا طلبگار:
مزمل شیخ بسملؔ

(155 مرتبہ دیکھا گیا)

مزمل شیخ بسمل

سلجھا ہوا سا فرد سمجھتے ہیں مجھ کو لوگ الجھا ہوا سا مجھ میں کوئی دوسرا بھی ہے

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

2 تبصرے

  1. Mian Jamshed says:

    بھائی آپ کا Method of teaching انتہائی آسان اور قابل قدر ہے۔

  1. December 15, 2015

    […] مفاعیل مفاعیل فعَل (2) مفعول مفاعلن مفاعیل فعَل ، انھی دو میں تسکین اوسط اور آخر میں اضافۂ ساکن سے کل چوب… ، ایک رباعی کے چار مصرعوں کو ان میں سے کسی بھی ایک یا […]

تبصرہ کریں