فکرِ این و آں نے جب مجھ کو پریشاں کردیا

غزل

(خواجہ عزیز الحسن مجذوبؔ)
فکرِ این و آں نے جب مجھ کو پریشاں کردیا
میں نے سر نذر جنون فتنہ ساماں کردیا
ان کو تو نے کیا سے کیا شوقِ فراواں کردیا
پہلے جاں پھر جانِ جاں پھر جانِ جاناں کردیا
ہو چلے تھے وہ عیاں پھر ان کو پنہاں کردیا
ہائے کیا اندھیر تو نے چشمِ گریاں کردیا
طبعِ رنگیں نے مری گل کو گلستاں کردیا
کچھ سے کچھ حسنِ نظر نے حسنِ خوباں کردیا
زاہدوں کو بھی شریکِ حسنِ رنداں کردیا
سینکڑوں کو دخترِ رز نے مسلماں کردیا
جاں سپردِ تیر اور خوں صرف پیکاں کردیا
پاس جو کچھ تھا مرے سب نذرِ مہماں کردیا
دردِدل نے اور سب دردوں کا درماں کردیا
عشق کی مشکل نے ہر مشکل کو آساں کردیا
دل قفس میں لگ چلا تھا پھر پریشاں کردیا
ہمصفیرو! تم نے کیوں ذکرِ گلستاں کردیا
جب فلک نے مجھ کو محرومِ گلستاں کردیا
اشکہائے خوں نے مجھکو گل بداماں کردیا
یہ تری زلفیں، یہ آنکھیں، یہ ترا مکھڑا، یہ رنگ
حور کو اللہ کی قدرت نے انساں کردیا
ہر چہ بادا بادما کشتی درآب انداخیتم
کرکے جرأت ان سے آج اظہارارماں کردیا
تلخ کردی زندگی شورش تری کچھ حد بھی ہے
اف مرے ہر زخم کو تو نے نمک داں کردیا
زلف ورخ کو ڈھانکئے یہ بھی کوئی انداز ہے
اِس کو حیراں کردیا اس کو پریشاں کردیا
پھونک دی اک روحِ نو مجھ میں مری ہر آہ نے
دردِ دل نے میرے رگ رگ کو رگِ جاں کردیا
تو نظر آنے لگا کی اس قدر گہری نگاہ
میں نے جس ذرّہ کو دیکھا چاہِ کنعاں کردیا
ٹوٹ جاتے کیوں نہ ٹانکے زخم کے دیکھا غضب
شاملِ بخیہ مرا تارِ گریباں کردیا
جوشِ وحشت کی مرے دیکھو عجائب کاریاں
دشت کو ذرّہ تو ذرّہ کو بیاباں کردیا
میرے چارہ گر کا دیکھے تو کوئی حسنِ علاج
محوِ دل سے امتیازِ درد و درماں کردیا
چپکے چپکے اندر اندر تو نے اے شوقِ نہاں
دل کو میرے راز دارِ حسنِ پنہاں کردیا
جن کی استادی پہ خود حکمت بجا کرتی تھی ناز
ایک امّی نے انہیں طفلِ دبستاں کردیا
میں ہوں رند پاک باطن دامنِ تر کو نہ دیکھ
دخترِ رز کو بھی میں نے پاک داماں کردیا
مجھ کو سوجھا بھی تو کیا مجذوؔب وحشت کا علاج
میں نے دل وابستۂ زلفِ پریشاں کردیا

یہ بھی پڑھیں:   چائے کے کپ سے موبائل فون چارج

(21 مرتبہ دیکھا گیا)

مزمل شیخ بسمل

سلجھا ہوا سا فرد سمجھتے ہیں مجھ کو لوگ الجھا ہوا سا مجھ میں کوئی دوسرا بھی ہے

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

تبصرہ کریں