قومی ترقی میں قومی زبان کا کردار

قومی زبان کے حوالے سے ﯾﮧ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺑﺪ ﻗﺴﻤﺘﯽ ﺳﻤﺠﮭیں ﯾﺎ ﮨﻤﺎﺭﯼ بے ضمیری ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﻏﻼﻣﺎﻧﮧ ﻣﻔﻠﻮﺝ ﺳﻮﭺ ہے ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﺁپ کو ﻣﮩﺬﺏ ﺍﻭﺭ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﻇﺎﮨﺮﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﺍﻗﺪﺍﻡ کرﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﭨﮭﺘﮯ ﺑﯿﭩﮭﺘﮯ ﺟﻮ ﺑﮭﯽ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﯽ ﮨﮯ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﻣﯿﮟ ﮐﺮﻧﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮐﯽ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮨﮯ نہ ﺍﺳﮑﯽ ﺑﯿﻦ ﺍﻻﻗﻮﺍﻣﯽ ﺳﻄﺢ ﭘﺮ ﻗﺪﺭ ﻭ ﻗﯿﻤﺖ ﺳﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﺟﻮ ﺗﺮﻗﯽ ﭘﺬﯾﺮ ﺍﻭﺭ ﺗﺮﻗﯽ ﯾﺎﻓﺘﮧ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﯿﻮﮦ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺍﺩﮬﺮ ﺍﯾﮏ ﻏﻠﻂ ﺳﻮﭺ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺩﺏ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﻟﻮﮒ ﺳﻮﭼﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻏﯿﺮ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﺮﻧﺎﮨﮯ ﺟﺒﮑﮧ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﻮ ﺻﺮﻑ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺑﭽﭙﻦ ﺳﮯ ﻻﺭﮈ ﻣﯿﮑﺎﻟﮯ ﮐﮯ ﻃﺮیقۂ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﯽ ﺑﺮﮐﺖ ﺳﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﭘﺮ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﺑﮭﻮﺕ ﺳﻮﺍﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﮐﺒﮭﯽ ﺍﺗﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﯿﺘﺎ۔ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﺍ ﻣﻘﺎﻡ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﺴﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﺳﯿﮑﮭﻨﺎ ﺑﮩﺖ ﺍﭼﮭﯽ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺱ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﭘﺮ ﺭﺍﺋﺞ ﮐﺮﻧﺎ ﮐﺴﯽ ﺑﺎ ﺿﻤﯿﺮ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ ﺷﯿﻮﮦ ﻧﮩﯿﮟ۔

ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺭﺩﻭ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﺍﻭﺭ ﻗﺪﺭ ﮐﺎ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﭘﺘﺎ ﭼﻼ ﺟﺐ ﻣﯿﮟ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﮐﮯ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﻣﺠﮭﮯ ﮨﺮ ﭼﯿﺰ ﯾﮩﺎﮞ ﺗﮏ ﮐﮧ ﺍﺳﻼﻣﯿﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﺷﺮﺗﯽ ﻋﻠﻮﻡ ﺗﮏ ﮐﻮ
ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﻣﯿﮟ ﺭﭨﻧﺎ ﭘﮍ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﻣﺠﮭﮯ ﯾﮧ ﺳﺐ کچھ ﻧﺎ ﮔﻮﺍﺭ ﻟﮕﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺁﺝ ﺗﮏ ﺑﺮﺩﺍﺷﺖ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﺗﮑﻠﯿﻒ ﺩﮦ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﻧﺠﯿﻨﺮﻧﮓ ﯾﺎ ،ﺳﺎﺋﻨﺴﯽ، ﻃﺒﯽ، ﻣﻌﺎﺷﺮﺗﯽ ،ﻣﻌﺎﺷﯽ ،ﺍﺻﻼﺣﯽ، ﺍﻭﺭ ﺟﻨﺮﻝ ﻣﻀﻤﻮﻥ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﮏ ﭘﺎﻧﭻ ﮐﻠﻮ ﮐﯽ ﺍﻧﮕﻠﺶ ﮈﮐﺸﻨﺮﯼ ﺑﮭﯽ ﮨر ﻟﻤﺤﮯ ﺳﺎتھ ﺭﮐﮭﻨﯽ ﭘﮍﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﮨﻢ ﺍﺱ ﺳﺎﺋﻨﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﮨﻢ ﺑﺎﺕ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ کی ﺑﺠﺎئے ﺍﮐﺜﺮ ﺍﺱ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﻭﻗﺖ ﺿﺎﺋﻊ ﮐﺮﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﮨﻤﯿﮟ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﮐﻮﺷﺶ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﯽ ﮔﺌﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﺎ ﮐﺴﯽ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﮐچھ ﺳﯿﮑﮭﻨﺎ ﺻﺮﻑ ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﺍﮐﮭﭩا ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺣﺪ ﺗﮏ ﮐﺎﻡ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﮮ ﺧﯿﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ میں ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﮨﻮﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ
ﭼﯿﺰ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻋﻠﻢ ﮨﻮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺯﻣﯿﻦ ﻭ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﺎ ﻓﺮﻕ ﮨﮯ۔ ﻣﻌﻠﻮﻣﺎﺕ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺳﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺱ ﭼﯿﺰ ﮐﯽ ﻧﻘﻞ ﺑﻨﺎﺋﯽ ﺟﺎﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﺁﭖ
ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮐﺴﯽ ﭼﯿﺰ ﮐﺎ ﻋﻠﻢ ﺁﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﭼﯿﺰ ﻣﯿﮟ ﺑﻨﺪﮦ ﺩﺭجۂ ﮐﻤﺎﻝ ﮐﻮ ﭘﮩﻨﭻ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔

یہ بھی پڑھیں:   منٹو اور اس کے جانشین

ﻣﯿﮟ ﺳﻮﭼﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﺑﯿﺸﮏ ﮨﻢ ﺍﻭﺭ ﮨﻢ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻟﻮﮒ ﺗﻮ ﺍﺱ ﻏﻠﻂ ﻃﺮیقۂ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﮐﮯ ﺑﮭﯿﻨﭧ ﭼﮍﮪ ﮔﺌﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﮨﻢ ﺳﺐ ﮐﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺁﻧﯽ ﻭﺍﻟﯽ ﻧﺴﻠﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺭﺍﻏﺐ ﮐﯿﺎ ﺟﺎئے ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻋﻤﻠﯽ ﺍﻗﺪﺍﻣﺎﺕ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺎﻡ ﮐﻮ ﮐﺮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﺍﻥ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﺳﮯ ﺳﯿﮑﮭﺎ ﺟﺎئے ﺟﻮ ﺳﺎﺭﮮ ﻋﻠﻮﻡ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻣﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﮍﻭﺱ ﻣﻠﮏ ﭼﯿﻦ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺳﺒﻖ ﺳﯿﮑﮭﻨﺎ ﮨﻮﮔﺎ ﺟﻮ ﮨﻢ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺁﺯﺍﺩ ﮨﻮﺍ ﻟﯿﮑﻦ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﺳﻮﭺ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﻏﻼﻡ ﺭﮨﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﮑﯽ ﺳﻮﭺ ﻗﻮﻣﯽ ﺗﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﻗﻮﻣﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﻮ ﺗﺮﺟﯿﺢ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺗﺮﻗﯽ ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﭘﺮ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﮔﺎﻣﺰﻥ ﮨﻮﺍ ﮐﮧ ﺁﺝ ﺍﻧﮕریزی ﺑﻮﻟﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻭﺭ ﮨﻤﺎﺭﯼ ﻧﻈﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﮩﺬﺏ ﻗﻮﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺍﺭﺑﻮﮞ ﮈﺍﻟﺮﺯﮐﯽ ﻣﻘﺮﻭﺽ ﮨﯿﮟ۔  ﮨﻢ ﻓﻮﺭﺍً ﯾﮧ کہہ کر ﺍﺭﺩﻭ ﮐﻮ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﮈﺍﻝ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﺏ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﻋﻠﻮﻡ ﮐﻮ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯﺍﻭﺭ ﺍﺗﻨﮯ ﻻﮐﮭﻮﮞ ﺳﺎﺋﻨﺴﯽ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﺳﺎﺋﻨﺴﯽ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺭﺩﻭ ﮐﮯ ﻧﺌﮯﺍﻟﻔﺎﻅ ﮈﮬﻮﻧﮉ ﮐﺮ ﻻﻧﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻨﺎﻧﺎ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﻣﺸﮑﻞ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﻧﺎ ﻣﻤﮑﻦ ﮨﮯ۔ ﺑﯿﺸﮏ ﯾﮧ ﻏﻮﺭ ﻃﻠﺐ ﺍﻭﺭ ﺑﻈﺎﮨﺮ ﻣﺸﮑﻞ ﺍﻣﻮﺭ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﯿﺎ ﯾﮧ ﻭﺍﻗﻌﯽ
ﻧﺎﻣﻤﮑﻦ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ؟ ﮨﻢ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺣﻞ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺗﻮﺟﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺘﮯ ﮐﮧ ﺁﯾﺎ ﺍﻥ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻣﺸﮑﻞ ﮐﻮ ﮐﯿﺴﮯ ﺣﻞ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ؟

یہ بھی پڑھیں:   وتظنون باللہ الظنونا

ﻣﯿﺮﮮ ﺧﯿﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﺎ ﻣﻤﮑﻦ ﯾﺎ ﺣﺪ ﺩﺭﺟﮯ ﮐﺎ ﻣﺸﮑﻞ ﮐﺎﻡ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﻧﮩﺞ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻃﺮیقۂ ﮐﺎﺭ ﭘﺮ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ﺟﺎئے ﺗﻮ ﻧﮩﺎﯾﺖ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﮐﮯ
ﺳﺎتھ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﮩﻼ قدم ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﻮﺟﮧ ﮨﺮ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﻃﺮﻑ ﻣﺒﺬﻭﻝ ﮐﺮﺍﺋﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺍﺩﺍ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ گو کہ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﮨﺎﮞ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﭘﺮ ﭘﯿﺶ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮈﺭﺍﻣﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﭽﺎﺱ ﻓﯿﺼﺪ ﺗﮏ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮐﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺑﻮﻝ ﮐﺮ ﭘﻮﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﻮ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮐﺎ ﮔﺮﻭﯾﺪﮦ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺗﺎﺛﺮ ﺩﯾﺎ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺍﺭﺩﻭ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﯼ ﮐﻮ ﺧﻠﻂ ﻣﻠﻂ ﮐﺌﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﻣﮩﺬﺏ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻣﯿﮟ ﺑﻮﻝ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﮑﺘﮯ ﺟﯿﺴﮯ ﭼﺎﺋﻨﯿﺰ ، ﺟﺎﭘﺎﻧﯽ ﻓﺮﺍﻧﺴﯿﺴﯽ ﻟﻮﮒ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﻮﻝ ﺳﮑﺘﮯ۔

ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺯﺑﺎﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺑﻮﻟﻨﺎ ﮔﻨﺎﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻧﺎ ﮨﯽ ﻗﺎﺑﻞ ﺗﻨﻘﯿﺪ ﺑﺎﺕ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﻋﻤﻞ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﻏﻠﻂ ﺳﻮﭺ ﭘﺮﻭﺍﻥ ﭼﮍﮬﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺭﺍ ﻧﻈﺎﻡ ﺍﺱ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﯽ ﭘﻮﺟﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﯾﮧ ﮐﺴﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﯽ ﻏﻼﻣﯽ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﭘﮩﻼ ﻗﺪﻡ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﺗﻮ ﯾﮩﯽ ﺳﻤﺠﮭﺘﺎ ﮨﻮﮞ ﮐﮧ ﻏﯿﺮ ﻗﻮﻣﻮﮞ ﮐﺎ ﮐﺴﯽ ﻗﻮﻡ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎ ﻏﻼﻡ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﭘﮩﻠﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﯾﮩﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮐﯿﺴﮯ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻟﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﯽ ﻗﻮﻣﯽ ﺯﺑﺎﻥ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﺣﺴﺎﺱ ﮐﻤﺘﺮﯼ ﮈﺍﻟﯽ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﻗﺪﻡ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﺭﺩﻭ ﮐﺎ ﻧﻔﺎﺫ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﺍﺕ ﺳﮯ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ﺟﺎئے ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯﺟﻮ ﺑﺎﺕ ﮐﺮﻧﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﭘﻮﺳﭧ ﻟﮑﮭﻨﯽ ﮨﮯ ﻣﻤﮑﻦ ﺣﺪ ﺗﮏ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﻟﮑﮭﻮﻧﮕﺎ / ﻟﮑﮭﻮﻧﮕﯽ ۔ﮨﻢ ﺍﺭﺩﻭ ﺍﻭﺭ ﺷﺮﯾﻌﺖ ﮐﮯ ﻧﻔﺎﺫ ﻣﯿﮟ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﮐﻮ ﺗﻮ ﺗﻨﻘﯿﺪ ﮐﺎ ﻧﺸﺎﻧﮧ ﺑﻨﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺍﻥ ﺩﻭ ﭼﯿﺰﻭﮞ ﮐﮯ ﻧﻔﺎﺫ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﯼ ﺭﮐﺎﻭﭦ ﮨﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﭼﯿﺰ ﺍﭘﻨﯽ ﺫﺍﺕ ﮐﯽ ﺣﺪ ﺗﮏ ﻧﺎﻓﺬ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﭘﺎﺗﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ نہ ﺗﻮ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺭﮐﺎﻭﭦ ﮨﮯ ﻧﺎ ﻋﺪﺍﻟﺘﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﻓﺎﻋﯽ
ﺍﺩﺍﺭﮮ۔

ﺗﯿﺴﺮﺍ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮﯼ ﻗﺪﻡ ﯾﮧ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺳﺎﺭﮮ ﺍﺩﺍﺭﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﻠﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﺭﺩﻭ ﮐﺎ ﻧﻔﺎﺫ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﺘﺎﺑﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﺭﺩﻭ ﺯﺑﺎﻥ ﻣﯿﮟ ﺗﺮﺟﻤﻌﮧ ﮐﯿﺎﺟﺎئے۔ ﻟﯿﮑﻦ ﮐﺎﻡ ﮐﯽ ﺁﺳﺎﻧﯽ
ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﮐﯿﺎ ﺟائے ﮐﮧ ﺟﺘﻨﮯ ﺑﮭﯽ ﺳﺎﺋﻨﺲ، ﭨﯿﮑﻨﺎﻟﻮﺟﯽ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮕﺮ ﻋﻠﻮﻡ ﮐﮯ ﺍﯾﺴﮯ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﻟﻔﻆ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﻧﮑﻮ ﻣﻦ ﻭ ﻋﻦ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ
ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﮰ ﺟﯿﺴﮯ time ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺯﻣﺎﻥ ﺍﻭﺭ space ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﮑﺎﻥ ﮐﺎ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﺗﻮ ﺁﺳﺎﻥ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﮔﺮ ﺑﺎﻗﯽ ﻣﺸﮑﻞ ﯾﺎ ﭘﯿﭽﯿﺪﮦ ﺍﻟﻔﺎﻅ ﺟﯿﺴﮯ
Relativity ﮐﺎ ﺗﺮﺟﻤﮧ ﺍﺿﺎﻓﯿﺖ ﻧﮧ ﮐﯿﺎ ﺟﺎئے ﺑﻠﮑﮧ ﺍس کو ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺭﺩﻭ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎئے ﮐﮧ ﮐﺴﯽ ﻃﺎﻟﺐ ﻋﻠﻢ ﮐﻮ  نئے سرے سے اصلاحات میں سر کھپانے اور مذید اضافی ﻣﺤﻨﺖ کرنے کی ضرورت نہیں ﭘﮍے گی ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺍﺻﻄﻼﺡ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﺑﮩﺮﻭﭖ ﺗﻼﺵ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺍﺫﯾﺖ سے بھی ﺑﭻ ﺟﺎئے گا۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻃﺮﺡ ﺍﺻﻄﻼﺣﺎﺕ ﮐﺎ ﺟﮭﮕﮍﺍ ﺑﮭﯽ ﮐﺎﻓﯽ ﺣﺪ ﺗﮏ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﺟﺎئے گا۔

یہ بھی پڑھیں:   ننگا مصافحہ

ﯾﮧ ﺗﮭیں ﻭﮦ ﺑﺎﺗﯿﮟ ﺟﻮ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﻠﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ نہ صرف ﺩﯾﮑﮭﻨﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮﮞ بلکہ اسی کو ملک و قوم کی ترقی کا راز سمجھتا ہوں اور اس مضمون میں بتائی گئی ان باتوں کیلئے کسی بھی ﺣﺪ ﺗﮏ ﻗﺮﺑﺎﻧﯽ ﺩﮮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﻮﮞ اور آپ سب سے اس قوم و ملک کی خاطر اس کی طرف توجہ دینے اور اس کے لیے خاطر خواہ انفرادی اور اجتماعی کوششیں تیز کرنے کی کی جائے۔

(121 مرتبہ دیکھا گیا)

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

2 تبصرے

  1. سعید حسن says:

    فواد صاحب تحریر بہت اچھی ہے بس ایک بات عرض کروں کہ اصطلاحات کو چھیڑنے والی بات اکثر کالم نویس کرتے ہیں تو میں بہت حیران ہوتا ہوں اور سوچتا ہوں کہ یہ معاملہ ایسے ہی ہے جیسے کوئی ڈاکٹر مریض کا نام سنتے ہی مریض کو نسخہ لکھ کر ہدایات اور احتیاط بتانا شروع کر دے جبکہ مرض کا اسے پتا ہی نہ ہو.... برادر محترم زیادہ تر اصطلاحات یونانی زبان میں ہیں اور ہر زبان میں یہی قابل قبول بھی ہیں اور اس وقت ان کا ترجمہ کرنے کی ضرورت بھی نہیں ہے اور نہ ہی کوئی تقاضا کر رہا ہے
    آپ قومی زبان کے محب ہیں اپنے قلم سے لوگوں میں یہ احساس پیدا کریں کہ ہمارا بنیادی نظام تعلیم اور دفتری کاروائی کے لیے انگریزی کی کوئی ضرورت نہیں بلکہ یہ تمام کام اردو میں بھی ہو سکتے ہیں جس سے معاشرے میں ہم اہنگی پیدا ہو گی
    وسلام

    • سید فواد مروت says:

      سعید حسن صاحب سب سے پہلے آپکا بہت مشکور ہوں کہ اپنی قیمتی وقت میں سے آپ نے ہمیں توجہ بخشی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔بےشک آپکی بات ٹھیک ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اصل میں بھائی جب بھی اردو سے محبت رکھنے والے لوگ اردو کی نفاذ کی بات کرینگے تو اس معاملے میں احساس کمتری کا شکار طبقہ بنیادی رکاوٹ اصطلاحات کے جنگ کی صورت میں کھڑی کر دیتے ہیں ۔۔۔۔تو اس بات کا ذکر کرنا اور اس کے لئے ممکن حل تجویز کرنا ضروری ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیونکہ اصطلاحات کا جھگڑا البتہ موجود ہے ۔۔۔جب بھی سائنس کی کسی کتاب کا ترجمہ ہوگا یہ جھگڑا ہوگا ۔۔وجہ سیدھی سادھی ہے کہ اردو میں سارے اصطلاحات مقرّر نہیں اور اردو نفاذ کے مخالفین اسی اختلاف کو رکاوٹ بنا رہے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ باقی اسکا حل جو آپ نے عرض کیا وہی میں نے لکھا ہے اور یہی طریقہ چین ،جرمنی اور جاپان نے اختیار کیا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔

تبصرہ کریں