وٹامن اے - ایک اہم غذائی جز (Micronutrient)

ہم بچھلے مضامین کو لے کر تسلسل سے پاکستان میں عورتوں اور بچوں کی اموات کی بڑھتی ہوئی شرح پر بات کر رہے ہیں۔

ایک زرعی ملک ہونے کے ناتے پاکستان میں خوراک مناسب مقدار میں موجود ہے۔ لیکن اس کے باوجود ہمارے ہاں عورتیں اور بچے غذائی کمی خاص طور پر (اہم غذائی اجزا) کی کمی کا شکار ہیں۔ ان غذائی اجزا کی کمی کی وجہ سے بچے اور عورتیں کئی بیماریوں کا شکار ہوجاتے ہیں۔

یہ تحریر بھی پڑھیں    icon-hand-o-left    نومولود بچے اور ناف کی حفاظت

ان اہم غذائی اجزا کی کمی کو چھپی ہوئی بھوک یا ( Hidden Hunger) کہا جاتا ہے۔ پاکستان میں وٹامن اے، آیوڈین، فولاد، زنک، اور فولک ایسڈ اہم غذائی اجزا ہیں جن کی کمی کو ختم کر کے موت کی شرح کو کم کیا جاسکتا ہے۔

آج ہم '' وٹامن اے '' پر بات کریں گے۔ طبی اور غذائی ماہرین کے مطابق وٹامن اے بصارت یا دیکھنے کو تقویت پہنچانے، جسمانی اور ذہنی نشونما، اور قوتِ مدافعت کو بڑھانے میں مددگار ثابت ہوتا ہے۔

وٹامن اے کی عالمی صورتحال

٭ پوری دنیا میں دو کروڑ بچے وٹامن اے کی کمی کا شکار ہیں۔

٭ ہر سال پانچ لاکھ بچوں کی صحت متاثر ہوتی ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   ہم جنسیت (Homosexuality)

٭ وٹامن اے کی کمی کی وجہ سے پانچ سال سے کم عمر بچوں کی موت کی شرح بڑھ سکتی ہے۔

٭ ہر سال ٢٥ لاکھ بچے وٹامن اے کی کمی کی وجہ سے موت کا شکار ہو جاتے ہیں۔

٭ پاکستان میں بھی وٹامن اے کی کمی بچوں میں بہت حد تک نظر آتی ہے۔

٭ پاکستان میں تعلیم کی کمی کی وجہ سے لوگوں کو معلوم ہی نہیں کہ وٹامن اے کن کھانے کی اشیا میں ہوتا ہے۔

وٹامن اے کا کام اور کردار

٭ وٹامن اے جسم کی قوتِ مدافعت بڑھانے میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔

٭ دوران حمل ماں کے پیٹ میں بچے کی نشونما، تندرستی، دیکھنے، سننے، اور چکھنے کی حس کی نشونا میں اہم کردار ادا کرتا ہے۔

٭ WHO نے سائنسی تحقیق کی بنیاد پر خسرہ کے علاج میں وٹامن اے کے کردار کو بہت اہم قرار دیا ہے۔

٭ وٹامن اے دست ، خسرہ اور نمونیا میں قوتِ مدافعت بڑھا کر موت کی شرح کو کم کرتا ہے۔

بچوں میں وٹامن اے کی کمی کے اثرات

٭ وٹامن اے کی کمی کے شکار بچے دست ، خسرہ اور نمونیا کی بیماریوں کا جلدی شکار ہوتے ہیں اور ان میں سے کافی موت کا شکار ہو جاتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:   دید کی تردید

٭ وٹامن اے کی کمی سے سانس کی نالیوں کی رطوبت میں کمی آجاتی ہے اس سے بچہ سانس کی اور بیماریوں کا بھی شکار ہو سکتا ہے۔

٭ وٹامن اے کی کمی سے پہلے بچوں کو دھندلا نظر آتا ہے، رات کی نظر چلی جاتی ہے اور پھر دن میں بھی کم نظر آنے لگتا ہے۔

٭ اکثر بچے تیز روشنی میں نہیں دیکھ پاتے، آنکھوں سے پانی بہنے لگتا ہے، یہ خطرے کی نشانی ہے۔

٭ آہستہ آہستہ آنکھوں کی چمک ماند پڑ جاتی ہے اور آنکھیں خشک ہوجاتی ہیں، آنکھیں سرخ رہتی ہیں، اور چھوٹے چھوٹے سفید دانے نظر آنے لگتے ہیں۔ اور آنکھوں کا پردہ سفید ہو جاتا ہے۔

٭ اگر وٹامن اے وقت پر نہ ملے تو آنکھوں میں زخم ہو جاتے ہیں۔ اس طرح بچہ نابینا ہو جاتا ہے۔

دورانِ حمل خواتین پر اثرات

٭ دوران حمل وٹامن اے کی کمی کی وجہ سے خواتین میں رات میں کم یا نہ دیکھنے کی بیماری (Night Blindness) کا شکار ہو جاتی ہیں۔

٭ وٹامن اے کی کمی سے دوران حمل عورتوں کی جلد خشک اور بال سخت ہو جاتے ہیں۔

٭ دورانِ حمل اس کی کمی سے بچے پر برے اثرات پڑتے ہیں۔

یہ بھی پڑھیں:   درد ختم کرنے والی دوائیں اور ان کے اثرات

وٹامن اے حاصل کرنے کی قدرتی ذرائع کیا ہیں

٭ تازہ پھل اور سبزیاں ، مثال کے طور پر آم، خوبانی اور گاجر وغیرہ میں وٹامن اے کافی مقدار میں موجود ہوتا ہے۔

٭ دودہ سے بنی چیزیں جیسا کہ دھی، مکھن، پنیر اور لسی وغیرہ۔

٭ جانوروں کی کلیجی، انڈے، گھی وغیرہ۔

٭ پتوں والی سبزیاں جیسا کی پالک ، ساگ ، سلاد میتھی وغیرہ۔

٭ چھوٹے بچوں کے لیے دو سال تک ماں کا دودہ۔

یاد رکھیے!

اگر ٹھیک طریقے سے وٹامن اے سے بھرپور غذا کو اپنی خوراک میں شامل کیا جائے تو مذکورہ بالا بیماریوں سے بچا جا سکتا ہے۔

وٹامن اے جگر میں جمع ہوتی ہے اور آہستہ آہستہ خون میں شامل ہوتی رہتی ہے۔

چار سے چھ ماں میں بچوں کو وٹامن اے کے کیپسول ضرور دیں ۔ متوازن خوراک ہم سب کی صحت کے لیے ضروری ہے۔

(221 مرتبہ دیکھا گیا)

ڈاکٹر سید عطاء المصطفی

ڈاکٹر سید عطاء المصطفی

ڈاکٹر سید عطاء المصطفی ایم بی بی ایس ڈاکٹر ہیں۔ سندھ ضلع سانگھڑ میں رہائش پذیر ہیں اور بیسک ہیلتھ ہونٹ کے انچارج کے طور پر تعینات ہیں۔ وہ ڈاکٹر ہونے کے ساتھ ادب دوست انسان ہیں اور فارغ اوقات میں شعر و شاعری پر بھی کرتے ہیں۔ اردو سرائے پر ان کی طب کے حوالے سے تحریریں شائع کی جاتی ہیں جو کہ طب اور صحت کے زمرے میں کلک کرکے پڑھی جاسکتی ہیں۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

تبصرہ کریں