گھر سے بھاگنے والی لڑکی

گھر سے بھاگنے والی لڑکی ﮐﻮ ﻋﺎﻡ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﭼﮭﮯ ﺣﺎﻻ‌ﺕ ﺳﮯ ﺳﺎﺑﻘﮧ ﭘﯿﺶ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﺎ- ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﺷﺎﺫ ﻭﺍﻗﻌﺎﺕ ﺍﯾﺴﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﻟﮍﮐﯽ ﮔﮭﺮ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﮌ ﮐﺮ ﺍﻃﻤﯿﻨﺎﻥ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮ ﭘﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺳﮑﻮﻥ ﺳﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮔﺰﺍﺭ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ- ﻭﮔﺮﻧﮧ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﮨﯽ ﻣﺼﺎﺋﺐ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻃﻮﻓﺎﻥ ﮐﮭﮍﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻭﮦ ﻟﮍﮐﺎ ﺟﻮ ﺳﮩﺎﻧﮯ ﺧﻮﺍﺏ ﺩﮐﮭﺎ ﮐﺮ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﻮ ﮔﮭﺮ ﭼﮭﻮﮌﻧﮯ ﭘﺮ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺐ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭼﮭﺖ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﺍﻭﺭ ﭘﯿﭧ ﺑﮭﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﻭ ﻭﻗﺖ ﮐﯽ ﺭﻭﭨﯽ ﮐﺎ ﺍﻧﺘﻈﺎﻡ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻋﺸﻖ ﮐﺎ ﺑﮭﻮﺕ ﯾک ﺪﻡ ﺍﺗﺮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ بے ﺟﺎ ﺗﻮﻗﻌﺎﺕ ﻭﺍﺑﺴﺘﮧ ﮐﯿﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻦ ﮐﺎ ﭘﻮﺭﺍ ﮨﻮﻧﺎ ﻣﻤﮑﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﯾﮧ ﺧﻮﺍﺏ ﭼﮑﻨﺎ ﭼﻮﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ- ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﺟﻠﺪ ﻧﺎﭼﺎﻗﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ہے۔ ﺍﺏ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﻮ ﯾﺎ ﺗﻮ ﺍﻥ ﺳﺐ ﺑﺮﮮ ﺣﺎﻻ‌ﺕ ﻣﯿﮟ ﺻﺒﺮ ﺳﮯ ﮐﺎﻡ ﻟﯿﻨﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﺩﻭﺑﺎﺭﮦ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺭﺟﻮﻉ ﮐﺮﻧﺎ ﭘﮍﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﺑﮭﺎﮒ ﮐﺮ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ‌ ﺷﺮﯾﮏ ﺳﻔﺮ ﻣﺨﻠﺺ ﻧﮧ ﮨﻮ ﺑﻠﮑﮧ ﻣﺤﺾ ﻭﻗﺖ ﮔﺰﺍﺭﯼ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ﮨﻮ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﯽ ﺗﮑﻠﯿﻔﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﺌﯽ ﮔﻨﺎ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﺗﺎﺭﯾﮏ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﮔﮭﺮ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﺗﻮ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﭼﮭﻮﮌ ﭼﮑﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺟﺐ ﯾﮧ ﺧﻮﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﺳﺮﺍﺏ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻋﺎﻓﯿﺖ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻧﻈﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ۔ ﺁﺝ ﮐﻞ ﺗﻮ ﺟﺮﺍﺋﻢ ﭘﯿﺸﮧ ﻋﻨﺎﺻﺮ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺑﺎﻗﺎﻋﺪﮦ ﮐﺎﺭﻭﺑﺎﺭ ﺑﻨﺎ ﻟﯿﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺟﮭﻮﭨﮯ ﺧﻮﺍﺏ ﺩﮐﮭﺎﺅ ﺍﻭﺭ ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﮭﮕﺎ ﮐﺮ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺟﺴﻢ ﻓﺮﻭﺷﯽ ﮐﮯ ﮐﺎﻡ ﭘﺮ ﻟﮕﺎ ﺩﻭ۔ ﺟﮩﺎﮞ ﺫﻟﺖ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﻧﺘﻈﺎﺭ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﻭﺍﻗﻌﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﮨﯽ ﻣﺘﺎﺛﺮﮦ ﻓﺮﯾﻖ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻟﮍﮐﮯ ﺍﺱ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺐ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﺑﺎﺍﺛﺮ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﺎ ﮨﺎتھ ﻟﮍﮐﮯ ﮐﯽ ﮔﺮﯾﺒﺎﻥ ﺗﮏ ﭘﮩﻨﭻ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﻟﮍﮐﯽ ﻟﮍﮐﺎ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﺧﻼ‌ﺹ ﺳﮯ ﻧﺌﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﻮﮞ ﺗﺐ ﺑﮭﯽ ﻭﮦ ﺍﺱ ﺧﺎﻧﺪﺍﻧﯽ ﮐﺸﻤﮑﺶ ﺳﮯ ﺑﺮﯼ ﻃﺮﺡ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻋﻤﻠﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﺧﻮﺍﺏ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﭘﺎ ﺳﮑﺘﺎ۔
ﺍﺏ ﺳﻮﺍﻝ ﯾﮧ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﻨﮯ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺗﺠﺮﺑﻮﮞ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﺍﯾﺴﮯ ﻭﺍﻗﻌﺎﺕ ﮐﯿﻮﮞ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﺍﭘﻨﺎ ﻣﺤﻔﻮﻅ ﺗﺮﯾﻦ ﻣﻘﺎﻡ ﮔﮭﺮ ﭼﮭﻮﮌﻧﮯ ﭘﺮ ﮐﯿﻮﮞ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ؟ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﯿﭩﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ، ﺍﭘﻨﮯ ﺑﮩﻦ ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﻮ ترﮎ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﭘﺮ ﺁﺧﺮ ﮐﯿﻮﮞ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﮯ؟ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺭﺷﺘﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺁﺧﺮ ﮐﯿﻮﮞ ﺑﮯ ﻣﻌﻨﯽ ﺍﻭﺭ ﻏﯿﺮ ﺍﮨﻢ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ؟ ﺫﯾﻞ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﮯ کچھ ﺍﺳﺒﺎﺏ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﯽ ﺟﺎ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔
ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﺎ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﺳﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﺍﻧﺘﮩﺎﺋﯽ ﺍﮨﻢ ﮨﮯ۔ ﻋﺎﻡ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﯾﮧ ﺳﻤﺠﮭﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺷﺎﯾﺪ ﮐﻤﺎ ﮐﺮ ﮐﮭﻼ‌ﻧﮯ ﺳﮯ ﯾﮧ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﺍﺩﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﭘﮍﮬﺎﻧﮯ ﻟﮑﮭﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﯾﮧ ﻓﺮﺽ ﺍﺩﺍ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺣﺎﻻ‌ﻧﮑﮧ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﺳﺎﺭﯼ ﺳﮩﻮﻟﺘﯿﮟ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﮯ ﺗﻌﻠﻖ ﮐﯽ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﯾﮏ ﺍﮨﻤﯿﺖ ﮨﮯ۔ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﭘﯿﺎﺭ ﺍﻭﺭ ﺗﻮﺟﮧ ﺑﮭﯽ ﻣﻠﻨﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ﺭﻭﯾﮯ ﭼﮭﻮﭨﯽ ﻋﻤﺮ ﺳﮯ ﺑﻨﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﯾﮏ ﻭﺍﻟﺪ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺁﻧﮯ ﭘﺮ ﺑﭽﮯ ﺍﮔﺮ ﺧﻮﺵ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺧﻮﺷﮕﻮﺍﺭ ﻋﻼ‌ﻣﺖ ﮨﮯ ﻭﺭﻧﮧ ﺍﺳﯽ ﻭﻗﺖ ﺳﮯ ﺳﻮﭼﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮ ﺩﯾﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ﻭﺍﻟﺪﮦ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺑﮭﯽ ﺳﺐ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯾﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮍﮪ ﮐﺮ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻻ‌ ﮐﺎﻡ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﺗﺮﺑﯿﺖ ﮨﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﺗﺮﺑﯿﺖ ﻭﻗﺖ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﮨﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﮐﺎﻡ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻣﺤﺾ ﭘﯿﺴﮯ ﺩﯾﻨﮯ ﺳﮯ ﯾﺎ ﮐﺮﺍﺋﮯ ﭘﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻭﺍﯾﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﺟﺘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺑﺎﺷﻌﻮﺭ ﮨﻮﮞ ﮔﮯ ﺍﺗﻨﺎ ﮨﯽ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﺎ ﺭﻭﯾﮧ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﮔﺮ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﮨﻮ ﺗﺐ ﺑﮭﯽ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﯽ ﻣﺮﺿﯽ ﮐﮯ ﺧﻼ‌ﻑ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﯽ۔ ﻣﺎﮨﺮﯾﻦ ﻧﻔﺴﯿﺎﺕ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﺎ ﺟﻮ ﺗﻌﻠﻖ ﭘﮩﻠﮯ ﺗﯿﻦ ﺳﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺁﺋﻨﺪﮦ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﺳﯽ ﭘﺮ ﮔﺰﺭﺗﯽ ﮨﮯ۔
ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﻮ ﺍﺳﻼ‌ﻡ ﮐﺎ ﺷﻌﻮﺭ ﺩﯾﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩﯼ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﮨﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﻟﺤﺎﻅ ﺳﮯ ﺍﻥ ﮐﻮ ﺍﺳﻼ‌ﻣﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺩﯾﻨﺎ ﻻ‌ﺯﻣﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻭﺍﺋﻞ ﻋﻤﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﮨﯽ ﻗﺮﺁﻥ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺩﯾﻨﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ﺭﺷﺘﻮﮞ ﮐﮯ ﺗﻘﺪﺱ، ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﺎ ﻣﻘﺎﻡ ، ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﯽ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯾﺎﮞ ﺻﺮﻑ ﭘﮍﮬﺎﺋﯽ ﻧﮧ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﺑﻠﮑﮧ ﻋﻤﻠﯽ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﻭﮦ ﻣﺎﺣﻮﻝ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﻼ‌ﻡ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ بیٹھ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﺟﯿﺴﮯ ﺍﮨﻢ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﭘﺮ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﻥ ﮐﯽ ﺭﮨﻨﻤﺎﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﮐﯽ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﮐﮧ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺳﻼ‌ﻡ ﻧﮯ ﻟﮍﮐﮯ ﻟﮍﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﮐﺲ ﻗﺪﺭ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﮔﺮ ﺑﭽﻮﮞ ﭘﺮ ﯾﮧ ﻭﺍﺿﺢ ﮨﻮ ﺟﺎئے ﮐﮧ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﺮﺿﯽ ﮐﺎ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻟﺤﺎﻅ ﺭﮐﮭﯿﮟ ﮔﮯ ﺗﻮ ﺑﮭﯽ ﻭﮦ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﺣﻤﻘﺎﻧﮧ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﺣﻤﺎﻗﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﺗﮯ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﻌﺎﻣﻼ‌ﺕ ﻣﯿﮟ ﻋﻤﻮﻣﺎً ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﯽ ﮨﭧ ﺩﮬﺮﻣﯽ ﺑﮭﯽ ﻭﺟﮧ ﺑﻨﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺑﻌﺾ ﺍﻭﻗﺎﺕ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﻣﺤﺾ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﺴﯽ ﺍﻧﺎ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﭘﺴﻨﺪ ﮐﯽ ﺷﺎﺩﯼ ﺳﮯ ﺭﻭﮎ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﭘﻨﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺟﺒﺮﺍً ﭨﮭﻮﻧﺴﻨﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻧﺘﺎﺋﺞ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﮯ ﺑﺎﻏﯽ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﻮ ﺑﺎﻏﯽ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﯾﮧ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺑﮍﯼ ﻭﺟﮧ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﻧﻔﻊ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﺿﺮﻭﺭ ﺳﻤﺠﮭﺎﻧﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﻟﯿﮑﻦ ﺑﭽﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﭽﯿﻮﮞ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﺍﺋﮯ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﺩﺑﺎﻧﺎ ﻧﮩﯿﮟ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﺭﺍﺋﮯ ﮐﯽ ﻏﻠﻄﯽ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﺯﺩﻭﺍﺟﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻘﺎﺑﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﮭﺎﮔﻨﺎ ﺍﻭﺭ ﺑﻐﺎﻭﺕ ﮐﺮﻧﺎ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﻘﺼﺎﻥ ﺩﮦ ﮨﮯ۔
ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﯽ ﺑﮯ ﺭﺍﮦ ﺭﻭﯼ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﯼ ﻭﺟﮧ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﺎ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﯽ ﻣﺼﺮﻭﻓﯿﺎﺕ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﻧﮧ ﺭﮐﮭﻨﺎ ﺑﮭﯽ ﮨﮯ۔ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻼ‌ﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﻮ ﺷﺎﻣﻞ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺍﻥ ﺳﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﻌﺎﻣﻼ‌ﺕ ﻣﯿﮟ ﻣﺸﻮﺭﮦ ﮐﺮﯾﮟ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﯽ ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﻋﺎﺩﺕ ﭘﺨﺘﮧ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﻮ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺑﮍﮮ ﻣﻌﺎﻣﻼ‌ﺕ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺳﮯ ﻣﺸﻮﺭﮮ ﺍﻭﺭ ﺍﺟﺎﺯﺕ ﮐﻮ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﺑﻨﺎﺋﯿﮟ۔ ﺍﻭﺭ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺭﻭﮎ ﭨﻮﮎ ﮐﯽ ﺑﺠﺎﺋﮯ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻣﺸﻮﺭﮦ ﺍﻭﺭ ﺭﮨﻨﻤﺎﺋﯽ ﺩﯾﮟ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﮯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﻓﯿﺼﻠﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﻧﺎﺩﺍﻧﯽ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﭻ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﯽ۔
ﮨﻤﺎﺭﺍ ﻧﻈﺎﻡ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﺷﺮﮦ ﺑﮭﯽ ﺍﺱ ﻗﺎﺑﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻌﺎﻣﻠﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﭘﺮ ﺑﮭﺮﻭﺳﮧ ﮐﯿﺎ ﺟﺎ ﺳﮑﮯ۔ ﺭﮨﯽ ﺳﮩﯽ ﮐﺴﺮ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﻧﮯ ﻧﮑﺎﻝ ﺩﯼ ﮨﮯ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﮈﺭﺍﻣﮯ، ﻓﻠﻤﯿﮟ، ﭘﺮﻭﮔﺮﺍم ﺍﻭﺭ ﺍﺷﺘﮩﺎﺭﺍﺕ ﺩﮐﮭﺎﺋﮯ ﺟﺎ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﺴﻞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺭﻭﺍﯾﺎﺕ ﺳﮯ ﺑﺎﻏﯽ ﮐﺮﮐﮯ ﺧﻮﺍﺑﻮﮞ ﮐﯽ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺑﺴﺎﯾﺎ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﭘﮭﺮ ﺍﺱ ﻧﺸﮯ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺧﺎﻧﺪﺍﻧﯽ ﻧﻈﺎﻡ ﮐﯽ ﺑﻨﯿﺎﺩﻭﮞ ﮐﻮ ﺗﻮﮌﺍ ﺟﺎ ﺳﮑﮯ۔ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﺴﮯ ﮐﺮﺩﺍﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﮨﯿﺮﻭ ﺍﻭﺭ ﮨﯿﺮﻭﺋﻦ ﮐﮯ ﺭﻭﭖ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺶ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﺳﻼ‌ﻡ ، ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﺍﻭﺭ ﻣﺸﺮﻗﯿﺖ ﮐﯽ ﺗﻤﺎﻡ ﺍﻗﺪﺍﺭ ﮐﺎ ﺟﻨﺎﺯﮦ ﻧﮑﺎﻝ ﺩﯾﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔
ﺍﯾﺴﮯ ﻣﯿﮟ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﭘﺮ ﮨﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯼ ﻋﺎﺋﺪ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﻮ ﻭﻗﺖ ﺩﯾﮟ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﯿﮑﮭﯿﮟ ﺟﻦ ﺳﮯ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﮐﯽ ﺗﺮﺑﯿﺖ ﮐﯽ ﺟﺎ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺑﭽﻮﮞ ﺳﮯ ﺍﭼﮭﺎ ﺭﻭﯾﮧ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﻣﺮﺿﯽ ﮐﺎ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﺧﯿﺎﻝ ﺭﮐﮭﯿﮟ۔ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﮯ ﺑﺮﮮ ﻋﻨﺎﺻﺮ ﺳﮯ ﺑﭽﺎﻧﮯ ﮐﺎ ﭘﮭﺮ ﭘﻮﺭ ﺍﮨﺘﻤﺎﻡ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﯾﮧ ﺍﻭﻻ‌ﺩ ﻓﺘﻨﮧ ﯾﻌﻨﯽ ﺁﺯﻣﺎﺋﺶ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﻮﻧﺎ ﺩﻧﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮﺕ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺭﺍﺣﺖ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﮨﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺧﺮﺍﺏ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺩﻧﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮﺕ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﺫﻟﺖ ﺍﻭﺭ ﭘﭽﮭﺘﺎﻭﺍ ﻣﻘﺪﺭ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﺎ ہے۔

یہ بھی پڑھیں:   کراچی آپریشن - ایک تاثر

(236 مرتبہ دیکھا گیا)

یاسر غنی

یاسر غنی

یاسر غنی صاحب سائنس کے شعبے نباتیات میں ماسٹرز ہیں۔ فی الحال ایک کالج کے پرنسپل ہیں اشاعت و بلاغت میں سر گرم ہونے کے ساتھ مطالعے کو اپنا مشغلہ رکھتے ہیں۔ اور لوکل اخبارات میں "نشانِ منزل" کے عنوان سے کالم بھی لکھتے رہتے ہیں۔

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

4 تبصرے

  1. سیّداسرار احمد says:

    بہت عمدہ یاسر بھائی
    اللہ آُپکو بہت جزائے خیر عطافرمائے۔ آمین

  2. yasirajk yasirajk says:

    جزاک اللہ محترم بھائی۔ پسندیدگی کا شکریہ

  3. دوست says:

    بھاگنے کا تصور آئندہ برسوں میں اپنی پسند سے کی گئی شادی سے تبدیل ہونے کی توقع کریں۔ جیسے جیسے خواتین اپنے مالی معاملات میں آزاد ہوں گے گھر سے "بھاگنے" والی بات قصہ پارینہ ہوتی جائے گی۔ اور خواتین اپنے جیون ساتھی کا انتخاب زیادہ خود اعتمادی سے خود کر سکیں گی۔

    • مزمل شیخ بسمل says:

      آپ نے درست تجزیہ فرمایا ہے۔ اس کے علاوہ ایک اور بڑا فیکٹر یہ بھی ہے کہ اب والدین اس حکمتِ عملی کو اکثر و بیشتر زیادہ روا رکھتے ہیں کہ بچی کو بھاگنے دینے کی بجائے اس کی پسند دریافت کرکے اسے ارینج میریج کی روایتی شکل دے کر عزت سے شادی کروا دیتے ہیں۔ یعنی معاشرے سے وہ انا اور ہٹ دھرمی کی ہوا اب کم ہوتی جا رہی ہے۔

تبصرہ کریں